1 2 3 4 5

Dāiyah

Paradise












ایمان ہے قالِ مصطفائی


ایمان ہے قالِ مصطفائی
قرآن ہے حالِ مصطفائی

اللہ کی سلطنت کا دولہا
نقش تمثال مصطفائی

کُل سے بالا رسل سے اعلےٰ
اجلال و جلال مصطفائی

اصحاب نجومِ رہنما ہیں
کشتی ہے آل مصطفائی

ادبار سے تو مجھے بچالے
پیارے اقبال مصطفائی

مرسل مشتاقِ حق ہیں اور حق
مشتاق وصال مصطفائی

خواہانِ وصالِ کبریا ہیں
جویانِ جمال مصطفائی

محبوب و محب کی ملک ہے ایک
کونین ہیں مالِ مصطفائی

اللہ نہ چھوٹے دستِ دل سے
دامانِ خیال مصطفائی

ہیں تیرے سپرد سب امیدیں
اے جودو نوال مصطفائی

روشن کر قبر بیکسوں کی
اے شمع جمال مصطفائی

اندھیر ہے بے ترے مِرا گھر
اے شمع جمال مصطفائی

مجھ کو شب غم ڈرا رہی ہے
اے شمع جمال مصطفائی

آنکھوں میں چمک کے دل میں آجا
اے شمع جمال مصطفائی

میری شبِ تار دن بنادے
اے شمع جمال مصطفائی

چمکا دے نصیبِ بدنصیباں
اے شمع جمال مصطفائی

قزاق ہیں سر پہ راہ گم ہے
اے شمع جمال مصطفائی

چھایا آنکھوں تلے اندھیرا
اے شمع جمال مصطفائی

دل سرد ہے اپنی لو لگادے
اے شمع جمال مصطفائی

گھنگھور گھٹائیں غم کی چھائیں
اے شمع جمال مصطفائی

بھٹکا ہوں تو راستہ بتاجا
اے شمع جمال مصطفائی

فریاد دباتی ہے سیاہی
اے شمع جمال مصطفائی

میرے دِل مردہ کو جلادے
اے شمع جمال مصطفائی

آنکھیں تری راہ تک رہی ہیں
اے شمع جمال مصطفائی

دکھ میں ہیں اندھیری رات والے
اے شمع جمال مصطفائی

تاریک ہے رات غم زدوں کی
اے شمع جمال مصطفائی

ہو دونوں جہاں میں منھ اجالا
اے شمع جمال مصفائی

تاریکیِ گور سے بچانا
اے شمع جمال مصطفائی

پُر نور ہے تجھ سے بزمِ عالم
اے شمع جمال مصطفائی

ہم تیرہ دلوں پہ بھی کرم کر
اے شمع جمال مصطفائی

لِلّٰہ اِدھر بھی کوئی پھیرا
اے شمع جمال مصطفائی

تقدیر چمک اٹھے رضا کی
اے شمع جمال مصطفائی


 میرے سرکار آتے ہیں

خوشی سب ہی مناتے ہیں میرے سرکارﷺ آتے ہیں 
 
دیوانے جھوم جاتے ہیں میرے سرکارﷺ آتے ہیں
 
خوشی ہے آمنہؓ کے گھر وہ آئے نور کے پیکر 
 
جو پیدا ہو کے سجدے میں اپنے سر کو جھکاتے ہیں
 
دھن بھی نور نور ہے بدن بھی نور نور ہے 
 
نظر بھی نور نور ہے وہ نورِ حق کہلاتے ہیں
 
جو دیکھا حسن یوسف کو تو اپنی انگلیاں کاٹیں 
 
وہ حسنِ مصطفی ﷺدیکھیں وہ اپنے سر کو کٹاتے ہیں
 
فرشتوں کی یہ سنت ہے کہ آقاﷺ سے محبت میں 
 
میناروں اور مکانوں پر جوہم جھنڈے لہراتے ہیں
 
ذرا جھنڈوں کو لہراؤ ذرا ہاتھوں کو لہراؤخدا کی اب رضا پاؤذرا ہاتھوں کو لہراؤ 
 
یہی وہ کام ہے جس سے مسلماں جنت پاتے ہیں
 
مہدمیں چاند کو دیکھا تو نوری نور سے کھیلا 
 
جہاں انگلی اٹھاتے ہیں وہیں پر چاند کو پاتے ہیں
 
وہ جھولا نور کا جھولاسراپا نور کا جھولا 
 
جنہیں نوری جھلاتے ہیں جنہیں نوری سلاتے ہیں
 
ولادت کی گھڑی آئی بہار اب جھوم کر چھائی 
 
وہ دیکھو آ گئے آقا ﷺدیوانے دھوم مچاتے ہیں
 

Today, there have been 57 visitors (159 hits) on this page!



اللهم صل على محمد وعلى آل محمد
كما صليت على إبراهيم وعلى آل إبراهيم إنك حميد مجيد
اللهم بارك على محمد وعلى آل محمد
كما باركت على إبراهيم وعلى آل إبراهيم إنك حميد مجيد

❄ ❄ ❄ ❄ ❄
وآخر دعواهم أنِ الحمد لله ربِّ العالمين  

Connect